You are currently viewing Philosophy of Congenital Diseases ( پیداہش امراض کا فلسفہ )

Philosophy of Congenital Diseases ( پیداہش امراض کا فلسفہ )

Philosophy of Congenital Diseases ( پیداہش امراض کا فلسفہ )

۔بدن میں دوران خون درست رہے ۔تو کوہی مرض نہیں ہوتا ہے
۔جب دوران خون میں گڑبڑ ہوجاے ۔تو تب اعضاء کے افعال میں فساد اجا تا ہے


۔۔جس کی تین صورتیں ہیں


۔1 .تحریک ۔.جب کسی عضو میں خون زیادہ جمع ہو جاے اس عضو کے فعل میں تیزی اجا تی ہے جس سے وہ غیر طبی افعال کرتا ہے اس کو تحریک کہتے ہیں
۔2 تحلیل ..جب عضو سے خون گزر رہا ہو تا ہے ۔اس میں ضعف اجاتا ہے تب اس کے افعال میں کمزوری اجاتی ہے اس کوتحلیل کہتے ہیں
۔تسکین ۔اور جس عضو سے خون جاچکا ہوتا ہے اس میں سستی اجاتی ہے اور اس کے افعال میں سستی اجاتی ہے
۔اس حالت کو تسکین کہتے ہیں

Philosophy of Congenital Diseases ( پیداہش امراض کا فلسفہ )

Philosophy of Congenital Diseases ( پیداہش امراض کا فلسفہ )

If the blood circulation in the body is correct, then there is no disease
When there is a disturbance in the blood circulation, then there is disorder in the functions of the organs
… which has three forms

  1. Movement. When a large amount of blood accumulates in an organ, the action of that organ is accelerated by which it performs non-medical functions.
  2. Dissolution. When blood is flowing through an organ. Weakness occurs in it. Then there is weakness in its functions. This is called dissolution.
    Relaxation. And the organ from which the blood has flowed becomes sluggish and its functions become sluggish.
    This condition is called relief

Visit My Youtube Channel.

Leave a Reply